خودکشی یا قتل ؟ 16 سالہ ملازمہ کی پوسٹ مارٹم رپورٹ میں اصل کہانی سامنے آگئی

1 min read

Sharing is caring!


کراچی : 16 سالہ گھریلوملازمہ کی پوسٹ مارٹم رپورٹ سامنے آگئی ، جس میں اہم انکشاف کرتے ہوئے موت کی وجہ بتائی گئی ہے۔

تفصیلات کے مطابق کراچی کے علاقے درخشاں میں بنگلے سے 16 سالہ گھریلوملازمہ کی پھندا لگی لاش ملنے کے واقعے میں بڑی پیش رفت سامنے آئی۔

گھریلوملازمہ کی پوسٹ مارٹم رپورٹ سامنے آئی ، جس میں میڈیکولیگل ذرائع نے بتایا ہے کہ پوسٹ مارٹم رپورٹ میں ابتدائی طور پر لڑکی سےزیادتی کے شواہد ملے اور موت گلا گھونٹنے کے باعث ہوئی۔

میڈیکولیگل کہنا تھا کہ پوسٹمارٹم کی حتمی رپورٹ ملےپرہی باضابطہ طورپرتصدیق کی جاسکے گی۔

پولیس حکام نے کہا ہے کہ پوسٹ مارٹم کی حتمی رپورٹ کاانتظارہے، لڑکی کےموبائل فون کا ڈیٹا بھی حاصل کیا جارہا ہے ، واقعےکی نوعیت کےبارے میں فی الحال کچھ نہیں کہا جاسکتا۔

خیال رہے مقتولہ پاریہ کے والد نے درخشاں تھانے میں قتل کا مقدمہ درج کرادیا ہے ، جس میں مقتولہ بچی کے والد نے بنگلے کے مالکان اور ملازمین پر بچی کو قتل کرنے کا شبہ ظاہر کیا ہے۔

مقتولہ پاریہ کے والد کا کہنا تھا کہ بیٹی پاریہ کو 10 ماہ قبل بنگلے میں ملازم رکھوایا تھا جو مستقل طور پر بنگلے میں ہی رہائش پذیر تھی، 12مئی کو بیٹی کو فون کیا تقریباً پونے گھنٹے تفصیلی بات ہوئی تھی۔

12 مئی کو ہی 5 بجے بنگلے کے مالک کے بیٹے شہروز نے فون کرکے بتایا کہ آپ جلدی کراچی پہنچو آپ کی بیٹی نے پنکھے سے لٹک کر خودکشی کرلی ہے۔

یاد رہے کراچی کے علاقے درخشاں میں بنگلےسےنوعمر ملازمہ کی پھندا لگی لاش اتوارکوملی تھی۔

Comments





Source link

Oval@3x 2

Don’t miss latest news!

Select list(s):

We don’t spam! Read our [link]privacy policy[/link] for more info.

🕶 Relax!

Put your feet up and let us do the hard work for you. Sign up to receive our latest news directly in your inbox.

Select Your Choice:

We’ll never send you spam or share your email address.
Find out more in our Privacy Policy.

🕶 Relax!

Put your feet up and let us do the hard work for you. Sign up to receive our latest news directly in your inbox.

Select Your Choice:

We’ll never send you spam or share your email address.
Find out more in our Privacy Policy.

Sharing is caring!

You May Also Like

More From Author